fbpx
News Test Cricket

میں اپنی گیم سے بہت زیادہ پریشان ہوں مگر – – – اظہر علی

اظہر علی جو کہ پاکستان ٹیسٹ کرکٹ ٹیم کے کپتان ہیں آج کل اپنی خراب پرفارمنس کی وجہ سے بہت زیادہ تنقید کا سامنا کر رہے ہیں – ان کے بارے میں یہ بھی کہا جا رہا ہے کہ وہ جب سے کپتان کے عہدے پر فائز ہوئے ہیں تب سے ان کی پرفارمنس ٹھیک نہیں رہی ہے – دوسری طرف جب اظہر علی سے ان کی پرفارمنس کے حوالے سے بات کی جائے تو وہ اس حوالے سے خاصے مظبوط دیکھائی نہیں دیتے ہیں – اظہر علی ایک پریس کانفرنس کے دوران دوسرے ٹیسٹ میچ کے حوالے سے بات کر رہے تھے – جس میں انھوں نے بارش کی وجہ سے پیش آنے والی رکاوٹوں کا بارے میں بات کی

اظہر علی نے مزید کہا کہ ان کا خیال تھا کہ دوسرے ٹیسٹ میچ میں بارش کے بعد دھوپ لگے گی اور پچ کی کنڈیشن تبدیل ہو جائے گی مگر ایسا کچھ نہ ہوا جس کی وجہ سے ہمارا پلان فلاپ ہو گیا مگر بابر اعظم ، محمّد رضوان اور عابد علی کی ذمّہ دارانہ بیٹنگ کی وجہ سے پاکستانی ٹیم نے ایک اچھا سکور کر لیا – مگر بارش نے دوسرے ٹیسٹ میچ میں بہت زیادہ پریشان کیا تھا جس کی وجہ سے ایک انننگز بھی پوری نہیں ہو سکی ہے

جبکہ بولرز کے بارے میں بات کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ ہمارے بولرز نے شروع سے ہی بہت اچھی بولنگ شروع کر دی تھی مگر پھر بارش نے ہمیں آ لیا اور ہم یہاں پر بے بس ہو گئے – مگر ایک دفعہ پھر اظہر علی سے ان کی ذاتی پرفارمنس کے حوالے سے بات کی گئی تو ان کا جواب تھا کہ وہ اپنے اندر اعتماد محسوس کر رہے ہیں اور ان کو امید ہے کہ وہ بہت جلد فارم میں آ جائیں گے

دوسری طرف انھوں نے محمّد رضوان کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ ان کا فارم میں آنا ہمارے لیے بہت زیادہ خوش آئند ہے اور خاص کر وہ جس مشکل کنڈیشن میں کھیلے ہیں اس طرح پلیئر کی صلاحیت مزید نکھر کر باہر آتی ہے اور مجھے امید ہے کہ وہ اگلے ٹیسٹ میچ میں بھی اس سے بھی بہتر بیٹنگ کریں گے –

دوسری طرف اظہر علی نے اسد شفیق کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہاکہ وہ بھی اس وقت مشکل وقت سے گزر رہے ہیں مگر ہمیں امید ہے کہ وہ بھی بہت جلد اپنی فارم میں واپس آ جائیں گے – اس کے ساتھ ساتھ انھوں نے پھر اپنی بات کرتے ہوئے کہا کہ ان کو اس بات کا پروا پورا احساس ہے کہ ان کو اپنی بیٹنگ اور پرفارمنس بہت بہتر کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ اس کے بغیر کوئی چارہ نہیں ہے

انہوں نے کہا کہ وہ امید کرتے ہیں کہ تیسرے ٹیسٹ میچ میں وہ ایک اچھی انننگز کھیل کر جائیں گے – اس کے ساتھ ساتھ انھوں نے یہ بھی کہا کہ وہ سمجھ سکتے ہیں کہ کپتان ہونے کے ناطے  ان کے لیے رنز بنانا بہت ضروری ہے مگر اس کے ساتھ ساتھ انھوں نے دوسرے لڑکوں کی بھی بہت زیادہ تعریف کی جو کہ اس کنڈیشن میں سکور کر رہے ہیں اور اظہر علی کے لیے زیادہ مشکلات پیدا نہیں کر رہے ہیں

مزید پڑھیں: اس پاکستانی کرکٹر نے ملک کے باہر پاکستان کا نام اونچا کر دیا

اس کے ساتھ ساتھ اظہر علی نے یہ بھی کہا کہ وہ بہت زیادہ خوش قسمت ہیں کہ ہمارے پاس ایسے ینگ فاسٹ بولرز ہیں جوکہ بہت کم ٹیموں کے پاس ہیں اور وہ بہت زیادہ تلنٹڈ ہیں – اور کے ساتھ ساتھ وہ اپنے ملک کے لیے بہت کچھ کرنا چاہتے ہیں – اظہر علی نے آخر میں کہا کہ ان کی کوشش ہو گی کہ وہ آخری ٹیسٹ میچ جیت کر اس سیریز کو برابر کریں

Leave a Comment