پاکستان بمقابلہ سری لنکا پہلے ٹیسٹ میچ کا تیسرا دن، موسم کی بے رخی جاری

پاکستان بمقابلہ سری لنکا پہلے ٹیسٹ میچ کے تیسرے دن بھی کھیل موسم کی وجہ سے متاثر ہے۔ تین دن میں فقط 91.5 کا کھیل ممکن ہو سکا ہے۔ سری لنکا نے اب تک چھ وکٹ کے نقصان پر 282 رنز بنا رکھے ہیں۔ پاکستان کی جانب سے شاہین شاہ آفریدی اور نسیم شاہ نے بالترتیب دو دو، جب کہ عثمان شماری اور محمد عباس نے ایک ایک وکٹ حاصل کی ہے۔

شائقین کرکٹ جو کہ دس سال بعد ٹیسٹ کرکٹ کی پاکستان واپسی پر نہایت خوش تھے، موسم کے باعث میچ ٹھیک طرح سے مکمل نہ ہونے پر نہایت مایوسی کا شکار ہیں۔ کرکٹ کے حلقوں میں یہ بات کی جارہی ہے، اس قدر جدید دور میں بھی ایسا کیوں ممکن نہیں کہ ٹیسٹ میچ کو موسم سے متاثر ہونے سے بچایا جا سکے۔
اس ضمن میں، ایک حلقہ یہ بات بھی کر رہا ہے کہ ریڈبال ٹیسٹ میچ کو موسم کی مناسبت سے پنک بال ٹیسٹ میچ میں بدل دیا جائے۔ تاکہ وقت کا زیاں روکا جا سکے۔

اس دلچسپ رائے کے خلاف یہ بات بھی ہو رہی ہے کہ اگر ریڈبال ٹیسٹ میچ کو پنک بال میں بدل دیا جائے تو گیند کی عمر اور حالت کو کس طرح قوانین کے مطابق استعمال کیا جائے گا؟ یاد رہے کہ جب گیند گراؤنڈ سے باہر چلی جائے یا خراب ہو جائے تو متبادل کے طور پر جو گیند استعمال کی جاتی ہے اس بات کا خیال رکھا جاتا ہے کہ اس کی عمر اور حالت بالکل ویسی ہی ہو جیسے کہ پہلے گیند کی تھی۔ بہرحال یہ ایک دلچسپ بحث ہے۔

اس میں کوئی شک نہیں کہ اس جدید دور میں جب کرکٹ میں بے شمار قوانین موجود ہیں، موسم کے باعث کھیل کا زیاں ایک مزاحقہ خیز عمل محسوس ہوتا ہے۔
موسم کے باعث راولپنڈی میں ہونے والے پاکستان بمقابلہ سری لنکا ٹیسٹ سیریز کا پہلا میچ اپنی نوعیت کا ایک تاریخی میچ ہے۔ جو کہ موسم کے باعث ٹھیک طرح سے وقوع پذیر ہونے سے قاصر ہے۔

You May Also Like

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *