میں شعیب اختر سے یہ اعزاز چھین کر دم لوں گا – آسٹریلوی بولر

دوستو آپ تو جانتے ہی ہیں کہ جب بھی کرکٹ کی دنیا میں فاسٹ بولنگ کی بات کی جائے گی اور اس سے بھی آگے اگر تیز ترین بولنگ کی بات کی جائے گی تو یقینا آپ شعیب اختر کا نام لیے بغیر نئی رہ سکتے ہیں – آج بھی ہم اس آرٹیکل میں شعیب اختر سے متعلق ہی بات کریں گے جس میں انھوں نے 3 0 0 2 میں ورلڈ کپ کے اندر انگلینڈ ٹیم کے خلاف بولنگ کرواتے ہوئے ایک ریکارڈ قائم کیا تھا اور اس کے بعد آج 7 1 سال گزرنے کے باوجود کوئی بھی فاسٹ بولر اس ریکارڈ کو توڑ نہیں سکا ہے – اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ اس کے پاس پاس بولر آئے ضرور ہیں مگر شعیب اختر کے قائم کردہ نمبر کوئی کوئی بھی عبور نہیں کر سکا ہے

دوستو اگر ہم تیز ترین بولنگ کی بات کریں تو آسٹریلیا کے بولر بھی اس معاملے میں کچھ کم نہیں ہیں – آسٹریلیا کے بہت زیادہ ایسے بولر ہیں جوکہ پاکستان کے کئی بولرز کی نسبت بہت تیز گیند بازی کرتے ہیں مگر وہ شعیب اختر کی گیند بازی کا ابتک مقابلہ نہیں کر سکے ہیں – آسٹریلیا کے بولرز مین بریٹ لی بھی ایک بہت اہم بولر ہیں جنہوں نے  5 0 0 2 میں نیوزی لینڈ کی ٹیم کے خلاف 1.1 6 1 کلو میٹر کی رفتار سے بولنگ کروائی تھی

یہی نہیں آسٹریلیا کے ایک اور بولر ہیں جن کا نام ہے شان ٹیٹ جوکہ اپنے بولنگ ایکشن کی وجہ سے زیادہ دیر کرکٹ میں اپنا نام نہیں بنا سکے ہیں مگر جب تک وہ کرکٹ میں رہے ہیں انہوں نے اپنے مخالفین کو اپنی تیز ترین گیند بازی سے ہمیشہ پریشان کیا ہے شان ٹیٹ نے بھی انگلینڈ کے خلاف لارڈ کے مقام پر 1.1 6 1 کلو میٹر کی ہی رفتار سے گیند پھینکی تھی مگر وہ بھی شعیب اختر اک ریکارڈ تورٹے تورٹے رہ گئے اور ان کے 2 پائنٹ کم تھے

اگر ہم اس سے پہلے کی بات کریں تو جیف تھامسن نے 6 7 9 1 میں تیز ترین گیند پھینکی تھی جس کی سپیڈ  6 . 0 6 1 کلو میٹر کی رفتار سے گیند پھینکی تھی اور پھر ان کا ریکارڈ پاکستان کرکٹ ٹیم کے مایہ ناز بولر شعیب اختر نے پھینکی اور وہ دنیا کے تیز ترین بولر بن گئے تھے ان کی بولنگ کی سپیڈ 3 . 1 6 1 کلو میٹر فی گھنٹہ تھی

اب ہم بات کریں گے آسٹریلیا کے اس بولر کی جس نے پہلے بھی بہت تیز گیند بازی کا مظاہرہ کیا ہوا ہے اور اس کرکٹر کا نام ہے مچل سٹارک – جی ہاں دوستو اس نے نیوزی لینڈ کے خلاف واکا کے مقام پر ایک ٹیسٹ میچ کے دوران 4 . 0 6 1 فی کلو میٹر کی رفتار سے گیند پھنک چکے ہیں اور اب وہ چاہتے ہیں کہ کسی نہ کسی طرح شعیب اختر کے قائم کردہ ریکارڈ کو توڑ سکیں

سننے میں آ رہا ہے کہ اس سلسلے میں مچل سٹارک نے اپنی کوششیں بہت زیادہ تیز کر دی ہیں اور اس حوالے سے مچل نے اپنی پریکٹس کے دوران وزن کا بھی اضافہ کر دیا ہے تاکہ وہ اس ریکارڈ کو جلد از جلد پکڑ سکیں – مچل سٹارک کے بارے میں یہ بات بھی مشھور ہے کہ انہوں نے جب اپنی تیز ترین گیند پھینکی تو وہ اگلے ہی دن میچ کے دوران تانگ کی تکلیف میں مبتلا ہو گئے تھے

مزید پڑھیں: بریکنگ نیوز: پاکستانی ٹیم نے اس ایک کام میں ساری ٹیموں کو پیچھے چھوڑ دیا

بہرحال اس دفعہ وہ اس معاملے مین کافی زیادہ پرجوش نظر آتے ہیں اور امید کی جاتی ہے کہ اس دفعہ اپنے اس ہدف کو پکڑ لیں گے اس سلسہ میں انھوں نے اپنے ویٹ ٹریننگ میں 5 کلو گرام وزن کا اضافہ بھی کرلیا ہے جوکہ اس ٹارگٹ کو حاصل کرنے کے لیے ضروری تھا – اگر دیکھا جائے تو مچل نے کافی دیر سے کوئی میچ بھی نہیں کھیلا ہے جس کی وجہ کرونا وائرس ہے اور اب جب وہ تازہ دم ہو کر آئیں گے تو ان کو اپنا مقصد  حاصل کرنے میں زیادہ مشکل کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا

You May Also Like

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *