ایشیا کپ اور ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ ملتوی ہونے کے بعد پاکستانیوں کے لیے خوشخبری

دوستو جیسا کہ آپ کو بھی علم تو ہو گیا  ہو گا کہ آئی سی سی نے کل ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ کے حوالے سے یہ اعلان کر دیا ہے کہ اس سال جو ٹی ٹوئنٹی کا ورلڈ کپ ہونا تھا وہ اگلے سال میں ہو گا اس خبر کو سنتے ہی بہت سارے لوگ افسردہ ہو گئے کیونکہ لوگ پچلے پانچ سالوں سے ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ کا انتظار کر رہے تھے مگر اس کرونا وائرس کی وجہ سے جہاں اور بہت سارے دنیا کا نظام ڈسٹرب ہوئے ہیں وہاں پر کرکٹ کی دنیا کو بھی کافی دھچکا لگا ہے

لیکن یہاں پر میں ایک بات ضرور شیئر کرونگا کہ اگر کسی ملک کو ٹی ٹوینٹی ورولڈ کپ ملتوی ہونے کا فائدہ ہوا ہے تو وہ ہے انڈیا – دوستو کیا آپ جانتے ہیں کہ انڈیا نے ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ کو ملتوی کروانے میں بہت اھم رول پلے کیا ہے – اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ کرونا وائرس کا خطرہ ابھی تک موجود ہے اور لوگ اپنی زندگی کی بازی آج بھی ہار رہے ہیں

مگر اس کوئی اور حل بھی نکل سکتا تھا جیسا کہ اس دنیا میں نیوزی لینڈ ایک ایسا ملک ہے جوکہ کرونا وائرس سے فری ہو چکا ہے اور ان کے وزیر اعظم نے اس کا اعلان بھی کیا تھا کہ وہ اب کرونا سے فری ہونے والے پہلے ملک کی وزیر اعظم ہیں – اور اس کے بعد نیوزی لینڈ کرکٹ بورڈ نے آئی سی سی کو یہ پیشکش بھی کی تھی کہ اگر وہ چاہییں تو ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ آسٹریلیا سے نیوزی لینڈ میں شفٹ کر سکتے ہیں

مگر اس میں انڈیا کو نقصان ہو جانا تھا کیونکہ اگر ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ شروع ہو جاتا تو انڈیا کی آئی پی ایل اس سال نہیں ہو سکتی تھی لہذا انڈیا نے اپنے پورے تعلقات استمال کرتے ہوئے ٹی ٹوینٹی ورلڈ کپ کو ملتوی کروا دی اور یہی نہیں اس سال سپتمبر کے مہینے میں پاکستان میں ایشیا کپ بھی ہونے جا رہا تھا مگر انڈیا نے ایشین کونسل میں بھی اپنا رسوخ استمال کرتے ہوئے اس کو بھی اگلے سال پر شفٹ کروا دیا ہے

ایشیا کپ کی وجہ سے بھی انڈیا کا آئی پی ایل کا معامله ڈسٹرب ہو رہا تھا جس کو انڈیا بالکل بھی برداشت نہیں کر سکتا تھا – یعنی کہ انڈیا نے کرونا وائرس کے خطرے کو استمال کرتے ہوئے سارے معاملات کو اپنی مرضی کے مطابق حل کر لیا ہے اور اب پاکستان کے پاس ٹائم ہی ٹائم ہے

لہذا پاکستان کرکٹ بورڈ اب اس سوچ رہا ہے کہ اگر ہمارے پاس اتنا ٹائم ہے تو پھر کیوں نہ پی ایس ایل کے بقیہ میچز کا انقاد ہی کروا لیا جائے – لہذا اس مسلہ کے حل کے لیے بہت جلد کابینہ اک اجلاس بلایا جائے گا اور امید کی جاتی ہے کہ آنے والے 24 سے 8 4 گھنٹوں تک پی ایس ایل کے حلوے سے کوئی اچھی خبر ضرور ملے گی جس کا پاکستانی قوم کو بڑی بے چینی سے انتظار ہے

یہاں آپ کو بتاتے جائیں کہ پاکستان کے اندر پی ایس ایل پہلی دفعہ سارے کا سارا ہی منعقد کروایا جا رہا تھا اور الله کی مہربانی سے بہت اچھے طریقے سے سارا یونٹ چل رہا تھا اور سب سے بڑی بات کہ اس دفعہ لاہور قلندر ٹیم نے بھی معمول سے ہٹ کر کارکردگی دکھائی تھی اور وہ ٹاپ 4 ٹیموں میں آ رہی تھی مگر الله کو کچھ اور ہی منظور تھا اور پھر کرونا وائرس نے پکڑ کر سب کی ایسی کی تیسی کر کے رکھ دی

مزید پڑھیں: میں ساری زندگی آصف علی زرداری کا احسان مند رہوں گا -شعیب اختر 

شروع شروع میں پاکستان کرکٹ بورڈ نے ایک دو میچز تماشائیوں کے بغیر بھی کروائے ہیں مگر اس کا کوئی مزہ نہیں آیا اور اس کے بعد تو ساری دنیا کو اچانک بند کر دیا گیا لہذا اب جتنے بھی میچز رہتے ہیں وہ امید کی جاتی ہے کہ اس سال کے آخر مہینوں میں ان کو کروا دیا جائے گا

You May Also Like

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *